رات کی ڈاءری سویرے سویرے

Image

آج یکم شوال 9اگست کا دن هے . لوگ اسے عید کا دن بھی قرار دے رهے هیں.هوسکتا هے دنیا میں عید منی هو لیکن ارض پاک میں اسے عید نھیں کھاجاسکتا.یه تو کچھ کرسمس ٹایپ کی کویی چیز هے که نیے کپڑے زیب تن کر لیے پرفیوم لگایا ڈانس کلب گیے کھایا پیا موج مستی اور یه سارے کام منافقت سے انجام پاتے هیں.کیونکه عید کرسمس یه سارے تھوار در حقیقت من کی خوشی کا نام ھے دل کے کھل اٹھنے کا نام هے اور سکون اور خوشی کی نعمتیں قدرت نے پاکستانی قوم سے چھین لی هے . اب حقیقی سکون هم کو میسر نھیں اور هوبھی کیسے.ملاحظه کریں که کیا ڈاءری پیج بنا که.

Image

صبح کی پهلی نیوز کے مطابق کوئٹہ کے علاقے مشرقی بائی پاس پر واقع جامعہ فاروقیہ میں جونہی نماز عید ختم ہوئی اور نمازی مسجد سے باہر نکلنے لگے تو موقع کی تاک میں بیٹھے مسلح افراد نے فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں 5 افراد موقع پر ہی جاں بحق جبکہ 30 سے زائد زخمی ہوگئے، لاشوں اور زخمی ہونے والوں کو سول اور کمبائن ملٹری اسپتال منتقل کر دیا گیا جہاں مزید 6 افراد دم توڑ گئے جبکہ کئی کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔ پولیس کے مطابق فائرنگ کے وقت مسجد میں سابق صوبائی وزیر علی محمد جتک اپنے گارڈز کے ہمراہ موجود تھے تاہم وہ معجزانہ طور پر بچ گئے۔ واقعہ کے بعد پولیس اور ایف سی اہلکاروں نے مشترکہ سرچ آپریشن کے دوران 8 مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا جن سے تفتیش شروع کردی گئی ہے۔ ایس پی تھانہ سریاب نے ملزمان اور ان سے برآمد ہونے والے اسلحہ میڈیا کے سامنے پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ حملہ آوروں کا ہدف علی محمد جتک تھے تاہم انہیں اس میں کامیابی نہیں ملی، پکڑے گئے ملزمان میں 5 ایسے افراد بھی شامل ہیں جن کی علی محمد جتک کچھ عرصہ قبل نشاندہی کرچکے تھے۔آخری خبریں آنے تک مرنے والوں کی تعداد 9هوچکی تھی.

1376054869762

دوسری نیوز کے مطابق بارہ کہو کے کیانی روڈ پر واقع ایک مسجد میں نماز جمعہ ادا کی جارہی تھی کہ خودکش حملہ آور نے مسجد میں گھسنے کی کوشش کی، حفاظت پر مامور افراد کی جانب سے روکنے پر اس نے فائرنگ کی جس سے دو افراد زخمی ہوگئے، اس موقع پر اس نے خودکش جیکٹ کے ذریعے دھماکے کی کوشش کی جو نہ پھٹ سکی اور جیکٹ میں آگ لگ گئی، اسی دوران مسجد کی سیکیورٹی پر معمور افراد نے حملہ آور پر فائرنگ کردی جس سے وہ موقع پر ہی ہلاک ہوگیا۔ بعد ازاں خودکش حملہ آور کی فائرنگ سے زخمی ہونے والے دونوں افراد کو مقامی اسپتال پہنچایا گیا جہاں ایک زخمی دم توڑ گیا جبکہ دوسرے کی حالت بھی تشویشناک ہے۔ واقعے کے بعد پولیس نے خودکش حملہ آور کی لاش تحویل میں لے کر علاقے میں سرچ آپریشن شروع کردیا جبکہ بم ڈسپوزل اسکواڈ نے خودکش جیکٹ کو ناکارہ بنادیا ہے۔

کل کوءٹه میں محب الله نامی ایس ایچ او ھلاک اور پهر اس شھید کی تدفین میں خود کش حمله اس وقوعے میں ھلاکتوں کی تعداد پهنچی 38یعنی دشمن کا وار چل چکا تھا.

28ویں روزے کو لیاری بلاسٹ جس کی تفصیل پچھلے پیج په میسر هے.اس وقوعے میں 6سے 13سال تک کے 14بچے لقمه اجل هویے.

صرف آخری تین دن 75 سے زاید ھلاکتیں 400سے زاید زخمی 4 بلاسٹ اٹیمٹ هویے تین کامیاب هویے دو فاءرنگ کے واقعات هویے کویٹه اور اورنگی ٹاؤن اور همارے عزیز دوست هماری فیملی پڑوس سب ایک دوسرے کو مبارکباد دیتے هویے خوشیاں منارهے هیں . ھم اگر اپنے آپ کو من حیث القوم ڈھیٹ اور بے غیرت لکهتے هیں تو کیا غلط لکهتے هیں.صرف ایم کیو ایم نے آج کے واقعات کی مذمت کی هے باقی سب تو عید منارهے هیں. سیاستدان ، عدلیه ، حکمران تو اندھے گونگے بھرے هیں.لیکن ھماری عوام کیوں اس ملا مافیا کے خلاف نھیں نکلتی. جو آج کے مسلمان کو کافر قرار دے کر اس کو خود کش بمبار بنارهی هے . ھم کیوں اس کنجر مافیا سے نھیں پوچھتے که آج تم نے مدرسوں کی کتابوں سے قرآنی قاعدوں سے کلمے سے پهلے کا سبق کیوں نکال باھر کیا؟. رسول مقبول کفار کو مسلمان کرنے آیے اور موجوده ملا نے مسلمان کو کافر کیا.آج درسی کتب سے اور بنیادی عربی کے قواعد سے ایمان مجمل و ایمان مفصل کو نکال باھر کیا گیا.آج کے معلم شاگرد کو یه 11 ایمانیات نھیں بتاتے شیعه هو یا سنی ، حمبلی هو یا مالکی کویی پیمانه ایمان نھیں بتارها کیونکه اگر بتادیا تو ھمارے قرار دیے گیے کافر مسلماں هوجاییں گے. یه بتاییں نه بتاییں هم بتاییں گے لیکن آج کے بلاگ کی طوالت کے پیش نظر  آج نھیں انشاء الله ملا مافیا اور آج کا اسلام کل کے بلاگ میں ملاحظه کیجیے گا.

چلتے چلتے حیدر عباس رضوی کو 29ویں روزے کو کسی نے مبارک باد دی تو آپ نے کها جس ملک میں 60 دنوں میں 56 حملے هویے هوں وهاں عید کیسی اور آج بروز عید الطاف حسین کا افسوس میں ڈوبا بیان که ملک نھیں چل رها تو طالبان کے حوالے کردیں…بات بھی صحیح ھے کیونکه اگر ظالمان آگیے تو کم از کم ایک نظام ریاست تو چلے گا ورنه یهاں تو ایک ملک 6 پیریلل نظام چل رهے هیں.

یھاں ملافیا اور علماء حق کا فرق ملحوظ هے.

….(جاری هے)

بتاریخ 10اگست2013 @junaid890

Advertisements

Author: Junaid Raza Zaidi

The Only Sologon is Pakistan First

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s