رات کی ڈایری سویرے.

کیا تبدیلی آگیی.؟      

Image

 ایک طویل غیر حاضری کے بعد  اپنی ڈایری پیج کے سلسله کو دوباره سے سے share کرنے کی جسارت کرتے هویے حقیر فقیر حاضر هے.

بھت کچھ هے لکهنے کو که کهیں عجب کرپشن هے تو کهیں اس سے جڑی باوردی و بے وردی غضب دھشت گردی هے لیکن ایسے میں جو چیز سب پر حاوی رهی وه ھارون رشید کا لکها گیا کالم تھا جو که دنیا اخبار میں مورخه ٢٢ اکتوبر کو چھپا.

Image

http://e.dunya.com.pk/detail.php?date=2013-10-22&edition=KCH&id=669275_17534156

سچ هی کها هے کسی نے که یه ٢٠١٣ هے ٩٢ نھیں.ھارون رشید نے جس طرح اعتراف کیا اور پهر ایک سچی گواهی تحریر کری بلکه موتی پرویے اور وه لکه دیا که اگر دوباره لکهنے کی سعی بھی کریں تو ممکن نه هو.ھارون رشید نے جو لکها وه لنک کی صورت میں شایع کیا جارها هے لیکن قابل غور بات یه هے که یه چھوٹے علوی سے لکهوایا گیا مسز منظور کے نام شایع هوا بلاگ نھیں بلکه ایک مسلمان کی آواز تھی.ایک ایسی آواز که دیکهنے والوں نے آنسوؤں کی زبان سنی.

سھیل وڑایچ ، حسن نثار ، سلیم صافی اور اب ھارون رشید سب نے جب حقایق جانے حقیقتیں آشکار هوییں تو سب ھی نے اعتراف کیا اور ایم کیو ایم کے وکیل بنے.

تبدیلی کی بات کرنے والوں کو اب سمجھ لینا چاهیے که تبدیلی چھروں کی نھیں هوا کرتی تبدیلی نظام کی بھی دور رس نتایج نھیں دیتی بلکه حقیقی تبدیلی سوچ کی تبدیلی هوتی هے ماینڈ سیٹ کی تبدیلی هوا کرتی هے اور اسی تبدیلی کی بنیاد لگتا هے پڑچکی هے.میرے جیسے ناامید لوگوں میں ھارون رشید کے کالم نے ایک نیی روح پهونک دی هے.

اب کچھ ذکر هوجایے سپریم کورٹ میں جاری پاکستان انٹر نیشنل ایرلاین کے حوالے سے جاری از خود نوٹس کی سماعت کا که جسٹس جواد ایس خواجه نے وکیل سرکار کو مخاطب کرکے کها که پوری قوم جانتی هے که PIA کو جان بوجھ کے خسارے میں دکهایا جارها هے تاکه ایک بااثر شخصیت جس کا نام دیواروں په تحریر هے وه اس کی واحد بولی لگایے اور خریدار بنے.لیکن سوال یه هے که چھوٹا بھایی تو بدنام تھا هی تھا اب تو بڑے کی کهانیاں بھی طشت از بام هونا شروع هوگیی هیں.

چلتے چلتے ذکر هوجایے حکومتوں په اس پریشر کا جو سپریم کورٹ نے لوکل باڈیز کے الیکشن کے حوالے سے builtکیا هے اور صوبایی حکومتیں راه فرار کی راهیں ڈھونڈ رهی هیں اور پیپلز پارٹی کے اراکین نے ڈپٹی کمشنر کے دفاتر کو اپنی اوطاق سمجھنا شروع کردیا هے اور حلقه بندیوں اور فھرستوں کے نام په پری پول رگنگ شروع کی هویی هے. سپریم کورٹ اس کا نوٹس لے اور الیکشن کمیشن کو انتخابی فھرستوں اور حلقه بندیوں کے حوالے سے واضح ھدایات دے.

جے.رضا.زیدی
Twitter handle @junaid890

Advertisements

Author: Junaid Raza Zaidi

The Only Sologon is Pakistan First

2 thoughts on “رات کی ڈایری سویرے.”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s