لوکل باڈی ایکٹ٢٠١٣ ایک سیاھ قانون

Junaid Raza Zaidi

زندگی میں جھاں سے کچھ سیکهنے کو ملے لے لو.اور نظام کے ستایے لوگوں سے بڑا استاد معاشرے میں
کویی نھیں هوتا.

ھمارے محلے میں ایک جگت ماموں هیں جو که اکثر اپنے کسی بھی بھانجے کے ساتھ کسی بھی مسلے په بولنا اور بھی کفن پهاڑ کے بولنا اپنا فرض سمجھتے هیں.سو آج رات پهر اپنے نامعلوم بھانجے کے ساتھ فلیٹ کے گیٹ په بیٹھ کے جو گفتگو فرمارهے تھے وه قلم بند کرنے کی کوشش کی هے.که شاید کسی بھانے هی سھی هم نیند سے جاگیں تو.

بھانجه: ماموں سنا هے تم نے ناظم واظم کا فارم بھردیا هے؟

ماموں: یار بھرا تو تھا لیکن اب واپس لے لیا.
ابے اب ناظم کهاں چیرمین کی بات کرو.ناظم لفظ تو ان سے هضم هی نھیں هوتا.

بھانجا : ھاں ھاں وهی لیکن کیوں؟

ماموں: یار جب ڈپٹی کمشنر کے آفس پهنچے تو بھت سے عقدے کهلے.پتا چلا…

View original post 637 more words

Advertisements

Author: Junaid Raza Zaidi

The Only Sologon is Pakistan First

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s